قیمتی نصیحتیں – 20

قیمتی نصیحتیں

الله رب العزت نےسید الانبیاء محمد صل اللہ علیہ و سلم کو عرب میں مبعوث فرمایا  تو وہ مردوں کا معاشرہ تها ،مرد کی حاکمیت تهی،اولاد میں بیٹے ہی قابل فخر تهے. بیٹی اور عورت حقیر کمتر تهی. اسلام  ہمیشہ سے سلامتی کا پیغام لے کر آیا مظلوم طبقہ کے لئے..قرآن و سنت کی ساری تعلیمات مظلوم طبقہ کو  ظلم و بربریت سے نجات دلانے کے لیے ہیں.غلاموں اور عورتوں کے حقوق متعین کئے گئے ہیں اور ظالمانہ نظام کی نفی اور متکبر خود پسند لوگوں کو عزاب  سے ڈرایا گیا ہے.. نبی کریم صل اللہ علیہ و سلم کی آخری وصیت میں بهی ان دو مظلوم طبقہ کے حقوق کی پاسداری پہ  زور  دیا گیا ہے..
، تکبر و رعونت  خود پسندی میں مبتلا   لوگ نہ اپنی اصلاح کر سکتے ہیں اور نہ کسی سے محبت کر سکتے ہیں،نہ ہی اپنے متعلقین کے دلوں میں جگہ بنا سکتے ہیں…یہ ایک ایسا شیطانی عمل ہے جس کی  وجہ سے   نصیحت ،تنقید ،مشورہ ناقابلِ برداشت ہوجاتا ہے.. اپنا ہر فعل مکمل طور پر درست اور اپنی عقل سب سے بہتر لگتی ہے…اختیارات کے مالک اور عموماً شوہر  بیوی کو  یہ  حق ہر گز نہیں دیتے کہ وہ  ان کی کسی برائ کی اصلاح کرنے کی کوشش کرے. اس  کا مطلب یہ سمجھا جاتا ہے کہ بیوی شوہر کے ایک درجہ زیادہ فضیلت کا انکار کر رہی ہے اور اس کی قوامیت کو چیلنج کر رہی ہے.
حقوق و فرائض کے بارے میں افراط و تفریط  میں مبتلا   یہ معاشرہ بے یقینی کا شکار ہے.. مغربی  اور  ہندوانہ تہذیب کے اثرات کے ساتھ  اسلامی تعلیمات کے اثر و رسوخ نے ازدواجی زندگی کو  زہنی خلجان میں مبتلا  کر رکھا ہے. اور
روکے ہے مجهے ایماں تو  کھینچے ہے  مجهے کفر  کی کشاکش رہتی ہے..
پختہ ایمان مضبوط ارادے کی  تشکیل کرتا ہے. اور یہ ارادہ  کسی بھی قسم کے حالات و واقعات میں متزلزل نہیں ہوتا  "قل آمنت بالله ثم استقم "زندگی کے ہر چھوٹے بڑے معاملے میں  اپنا جلوہ دکھاتا ہے..کامیاب ازدواجی زندگی کی  ہر کڑی اسی قول سے  جڑی ہے.  معاملاتِ زندگی کو حکمت و تدبر، دانائی، نرمی ،محبت و شفقت اور باوقار رعب کے ساتھ  چلانا مردانہ شیوہ ہے. اورکمزور ،زیر دست کی  دلجوئی کرنا اس کے ساتھ  ربوبیت کا معاملہ کرنا  مردانگی کی شان ہے اور دلوں میں عقیدت، محبت اور شیفتگی اسی سے پیدا ہوتی ہے اور بارعب  وقار  حاصل ہوتا ہے ،کمزوروں کے لئے اور خصوصاً بیوی کے ساتھ   فرعونیت  کا رویہ رکهنا ان کے ساتھ  حاکمانہ طرز عمل پہ زندگی گزارنا جاہلوں کا شیوہ ہے. اور اس سے دلوں میں نفرت پیدا ہوتی ہے..
کچھ مردانہ زہن کا  یہ عالم بهی ہوتا ہے کہ وہ صنف مخالف کا مطلب یہ سمجھتے ہیں کہ عورت کی ہر بات قابلِ مخالفت ہوتی ہے.. عموماً میاں بیوی میں چپقلش اسی  بات پہ ہوتی ہے کہ بیوی کی بات درست بهی ہو تو ماننے کے قابل نہیں سمجھی جاتی .اپنی غلطی بیوی کے سامنے تو ہر گز تسلیم  نہیں کی جاتی . .یہ شوہر کی انا کا مسئلہ ہوجاتا ہے،مردانہ  غرور نفس  اس میں ہتک محسوس کرتا ہے،غرض وہی  ظالمانہ ایام جاہلیت والی  سوچ  اکثر مردوں میں پائ جاتی ہے کہ  بیوی کو دوسرے درجے کی مخلوق سمجھا جاتا ہے. باندی کنیز کا تصور نہیں جاتا..شوہر  بن جانا حکمت و تدبر کا متقاضی ہے کہ  نبی کریم نے اخلاق کا  سب سے اعلیٰ درجہ اسی مرد کو  ملنے کی خوشخبری سنائی ہے جو اپنی  بیوی کے ساتھ اعلیٰ اخلاق رکهتاہے.اور الله تعالیٰ نے اپنے رسول محمد صل اللہ علیہ و سلم کے  بارے میں فرمایا   —   انک لعلی خلقِ عظیم

اور خود نبی کریم نے  عملا بتایا کہ وہی اپنے گھر والوں کے لئے بہترین اخلاق والے ہیں. کریمانہ اخلاق کا اعلیٰ نمونہ ہر طرح سے موجود ہے،   گهر والوں کے لئے نہ خشونت نہ عقوبت نہ زبان کی تلخی نہ  بے جا پندار میں مبتلا بلکہ قابلیتوں کا اعتراف، درگزر کا مزاج  تحمل کا مظاہرہ، نرمی و محبت  کا ا یسا دریا جس کی روانی میں کمی نہ آئے.  صنف نازک کی طبعی کمزوریوں کا احساس کرتے ہوئے ان  سے مشفقانہ برتاؤ کرنا ہی ایک  مہذب شوہر کو زیب دیتا ہے.

امام احمد ابن حنبل رح نے اپنے صاحب زادے کو شادی کی رات ۱۰ نصیحتیں فرمائیں..

ہر مرد  شادی  کرنے سے پہلے  ان نصیحتوں کو غور سے پڑھے اور اپنی زندگی میں عملی طور پر اختیار کرے. جو شادی شدہ ہیں وہ بهی اپنے انداز  و اطوار کا جائزہ لیں.

*میرے بیٹے، تم گھر کا سکون حاصل نہیں کرسکتے جب تک کہ اپنی بیوی کے معاملے میں ان ۱۰ عادتوں کو نہ اپناؤ*
لہذا ان کو غور سے سنو اور عمل کا ارادہ کرو
*پہلی دو* تو یہ کہ عورتیں تمھاری توجہ چاہتی ہیں اور چاہتی ہیں کہ تم ان سے واضح الفاظ میں محبت کا اظہار کرتے رہو.
لہذا وقتاً فوقتاً اپنی بیوی کو اپنی محبت کا احساس دلاتے رہو اور واضح الفاظ میں اسکو بتاؤ کہ وہ تمہارے لئے کس قدر اہم اور محبوب ہے.. اور اس کا وفادار ہے ..
(اس گمان میں نہ رہو کہ وہ خود سمجھ جائے گی، رشتوں کو اظہار کی ضرورت ہمیشہ رہتی ہے)
یاد رکھو اگر تم نے اس اظہار میں کنجوسی سے کام لیا تو تم دونوں کے درمیان ایک تلخ دراڑ آجائے گی جو وقت کے ساتھ بڑھتی رہے گی اور محبت کو ختم کردے گی
۳- عورتوں کو سخت مزاج اور ضرورت سے زیادہ محتاط مردوں سے کوفت ہوتی ہے
لیکن وہ نرم مزاج مرد کی نرمی کا بےجا فائدہ اٹھانا بھی جانتی ہیں
لہذا ان دونوں صفات میں اعتدال سے کام لینا تاکہ گھر میں توازن قائم رہے اور تم دونوں کو ذہنی سکون حاصل ہو
۴- عورتیں اپنے شوہر سے وہی توقع رکھتی ہیں جو شوہر اپنی بیوی سے رکھتا ہے
یعنی عزت، محبت بھری باتیں، ظاہری جمال، صاف ستھرا لباس اور خوشبودار جسم
لہذا ہمیشہ اسکا خیال رکھنا  (ہمارے ہاں شوہروں  میں یہ حس بالکل نہیں پائ جاتی ،خوش لباسی خوش گفتاری، وغیرہ گهر میں آتے ہی عنقا ہو جاتی ہے)
۵- یاد رکھو گھر کی چار دیواری عورت کی سلطنت ہے، جب وہ وہاں ہوتی ہے تو گویا اپنی مملکت کے تخت پر بیٹھی ہوتی ہے
اسکی اس سلطنت میں بےجا مداخلت ہرگز نہ کرنا اور اسکا تخت چھیننے کی کوشش نہ کرنا
جس حد تک ممکن ہو گھر کے معاملات اسکے سپرد کرنا اور اس میں تصرف کی اسکو آزادی دینا
۵- ہر بیوی اپنے شوہر سے محبت کرنا چاہتی ہے لیکن یاد رکھو اسکے اپنے ماں باپ بہن بھائی اور دیگر گھر والے بھی ہیں جن سے وہ لاتعلق نہیں ہو سکتی اور نہ ہی اس سے ایسی توقع جائز ہے
لہذا کبھی بھی اپنے اور اسکے گھر والوں کے درمیان مقابلے کی صورت پیدا نہ ہونے دینا کیونکہ اگر اسنے مجبوراً تمہاری خاطر اپنے گھر والوں کو چھوڑ بھی دیا تب بھی وہ بےچین رہے گی اور یہ بےچینی بالآخر تم سے اسے دور کردے گی
۷- بلاشبہ عورت ٹیڑھی پسلی سے پیدا کی گئی ہے اور اسی میں اسکا حسن بھی ہے
یہ ہرگز کوئی نقص نہیں، وہ ایسے ہی اچھی لگتی ہے جس طرح بھنویں گولائی میں خوبصورت معلوم ہوتی ہیں
لہذا اسکے ٹیڑھپن سے فائدہ اٹھاؤ اور اسکے اس حسن سے لطف اندوز ہو

اگر کبھی اسکی کوئی بات ناگوار بھی لگے تو اسکے ساتھ سختی اور تلخی سے اسکو سیدھا کرنے کی کوشش نہ کرو ورنہ وہ ٹوٹ جائے گی، اور اسکا ٹوٹنا بالآخر طلاق تک نوبت لے جائے گا
مگر اسکے ساتھ ساتھ ایسا بھی نہ کرنا کہ اسکی ہر غلط اور بےجا بات مانتے ہی چلے جاؤ ورنہ وہ مغرور ہو جائے گی جو اسکے اپنے ہی لئے نقصان دہ ہے
لہذا معتدل مزاج رہنا اور حکمت سے معاملات کو چلانا
۸- شوہر کی ناقدری اور ناشکری اکثر عورتوں کی فطرت میں ہوتی ہے
اگر ساری عمر بھی اس پر نوازشیں کرتے رہو لیکن کبھی کوئی کمی رہ گئی تو وہ یہی کہے گی تم نے میری کونسی بات سنی ہے آج تک
لہذا اسکی اس فطرت سے زیادہ پریشان مت ہونا اور نہ ہی اسکی وجہ سے اس سے محبت میں کمی کرنا..
یہ ایک چھوٹا سا عیب ہے اس کے اندر
لیکن اسکے مقابلے میں اسکے اندر بے شمار خوبیاں بھی ہیں

بس تم ان پر نظر رکھنا اور اللہ کی بندی سمجھ کر اس سے محبت کرتے رہنا اور حقوق ادا کرتے رہنا
۹- ہر عورت پر جسمانی کمزوری کے کچھ ایام آتے ہیں۔ ان ایام میں اللہ تعالٰی نے بھی اسکو عبادات میں چھوٹ دی ہے، اسکی نمازیں معاف کردی ہیں اور اسکو روزوں میں اس وقت تک تاخیر کی اجازت دی ہے جب تک وہ دوبارہ صحتیاب نہ ہو جائے
بس ان ایام میں تم اسکے ساتھ ویسے ہی مہربان رہنا جیسے اللہ تعالٰی نے اس پر مہربانی کی ہے
جس طرح اللہ نے اس پر سے عبادات ہٹالیں ویسے ہی تم بھی ان ایام میں اسکی کمزوری کا لحاظ رکھتے ہوئے اسکی ذمہ داریوں میں کمی کردو، اسکے کام کاج میں مدد کرادو اور اس کے لئے سہولت پیدا کرو.
۱۰- آخر میں بس یہ یاد رکھو کہ تمہاری بیوی تمہارے پاس ایک قیدی ہے جسکے بارے میں اللہ تعالٰی تم سے سوال کرے گا۔ بس اسکے ساتھ انتہائی رحم و کرم کا معاملہ کرنا.اس کی گواہی سب سے پہلی اور معتبر گواہی  ہوگی..
ربنا هب لنا من ازواجنا و ذریتنا قره اعین وجعلنا للمتقين إماما.  آمین
—————-
تحریر؛ ڈاکٹر بشری تسنیم

حوالہ امام احمد بن حنبل : ویب سائٹ جمیعت العلماء ساؤتھ افریقہ

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s